آرٹیکل 245 کا نفاذ ،معاملہ حساس نوعیت کا ہے لارجر بینچ تشکیل دیاجائے شوکت عزیز

اسلام آباد (ثناء نیوز)اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے اسلام آباد میں آرٹیکل 245 کے نفاذ کے خلاف دائر درخواست لارجر بینچ کی تشکیل کے لیے چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ جسٹس محمد انور خان کانسی کو بھجوا دی ۔ جسٹس شوکت صدیقی نے قرار دیا ہے کہ معاملہ حساس نوعیت کا ہے اس لیے لارجر بینچ تشکیل دیاجائے ۔ اسلام آباد ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن کے وکیل شیخ احسن الدین ایڈووکیٹ نے درخواست میں موقف اختیار کیا کہ اسلام آباد میں کوئی ایسے حالات نہیں کہ فوج کو طلب کیا جائے یا اس حوالہ سے کوئی نوٹیفکیشن جاری کیا جائے درخواست میں کہا گیا تھا کہ اگر اسلام آباد میں آرٹیکل 245 کا نفاذ ہوتا ہے تو عدالتیں بھی معطل ہو جائیں گی فوجی عدالتیں بنیں گی اس لیے ملک میں کوئی ایسے حالات نہیں ہیں کہ آرٹیکل 245 لگایا جائے درخواست گزار کا کہنا تھا کہ فوج طلب کرنے کے لیے پہلے درخواست دینا پڑتی ہے لیکن حکومت نے درخواست کے بغیر فوج طلبی کا نوٹی فکیشن جاری کر دیا جو غیر قانونی ہے عدالت کے جج نے درخواست پر سماعت کرتے ہوئے قرار دیا کہ معاملہ حساس نوعیت کا ہے اس لیے درخواست کی سماعت لارجر بینچ کرے جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے کیس کی سماعت گیارہ اگست تک ملتوی کرتے ہوئے معاملہ لارجر بینچ کی تشکیل کے لیے چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ انور خان کانسی کو بھجوا دیا ۔zs/md/ah/wa

Archives