بھارتی مسلمانوں نے اسرائیلی اور امریکی مصنوعات کا بائیکاٹ کر دیا

نئی دہلی (ثناء نیوز)بھارتی مسلمانوں نے فلسطین میں اسرائیلی مظالم کے خلاف اسرائیلی اور امریکی مصنوعات کا بائیکاٹ کر دیا ہے۔ بھنڈی بازار میں اس پر مکمل عمل ہورہا ہے جہاں ریسٹورنٹس اورفاسٹ فوڈ کے کاروبار سے منسلک مسلم برادری نے امریکی مشروبات کوکا کولا اور پیپسی فروخت کرنے سے انکار کردیاہے، گاہکوں کو اب فریش جوس اور زیرے کا پانی پیش کیا جارہا ہے،مالکان کا کہنا ہے کہ یہ قدم واشنگٹن کی جانب سے تل ابیب کی بے جا حمایت کیخلاف اٹھایاگیا ہے۔ مسلم کمیونیٹی بھارت میں اسرائیلی اور امریکی مصنوعات کا بائیکاٹ کرکے اپنا احتجاج رکارڈ کروارہی ہے ۔ بھارتی ریاست مدھیا پردیش کے لوگ ، فلسطینی شہر غزہ کے مظلوموں کے حق میں سڑکوں پر آگئے ۔ ہاتھوں میں اسرائیلی بربریت کے خلاف بینر اٹھائے شرکا نے اسرائیلی جارحیت کی پرزور مذمت کرتے ہوئے نعرے لگائے اور جنگ بندی کا مطالبہ کیا۔ شرکاء کا کہنا تھا کہ غزہ میں جاری اسرائیلی حملوں کے خلاف یاد داشت مدھیا پردیش کے وزیر اعلی کو پیش کی جائے گی۔ احتجاج میں شریک مسلم رہنما نے اس بات پر زور دیا کہ غزہ پر اسرائیل کے وحشیانہ حملوں اور اس کے حمایتی امریکا کے خلاف احتجاج کا سب سے موثر طریقہ اسرائیلی مصنوعات کا بائیکاٹ ہے اور اب اس پر عمل کیا جارہا ہے۔ مدھیہ پردیش اور ممبء میں مسلم کمیونیٹی کی غزہ کے مظلوموں کے حق میں یہ احتجاجی کاوشیں اسرائیلی حملوں کو روک سکیں یا نہیں ، غم سے چور فلسطینیوں کی ہمت ضرور بڑھائیں گی ۔یاد رہے کہ بھارت کی اسرائیل سے دوستی ہے لیکن بھارت کے مسلمان حکومت کی اس دوستی کی پرواہ کئے بغیر مظوم فلسطینی بھائیوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کر رہے ہیں۔ اگر دیگر اسلامی اور انسان دوست ممالک بھی میں یہ سلسلہ چل نکلا تو امریکہ اور اسرائیل کے لئے مظالم جاری رکھنا مشکل ہوجائے گا۔riz/shj/ily

Archives