غزہ پر اسرائیلی بربریت کا سلسلہ جاری،فلسطینی شہادتیں 1380 ہو گئیں

غزہ پر اسرائیلی بربریت کا سلسلہ جاری،فلسطینی شہادتیں 1380 ہو گئیں

غزہ (ثناء نیوز)غزہ پر اسرائیلی بربریت کا سلسلہ جاری،فلسطینی شہادتیں 1350 ہو گئیںاسرائیل کی طرف سے غزہ پٹی میں گزشتہ روزسے فضائی حملوں میں ہلاکتوں کی کم از کم تعداد 76 تک پہنچ گئی ہے۔غزہ پٹی میں اسرائیلی بمباری کانشانہ بننے والوں میں وہ 16 فلسطینی بھی شامل ہیں جنہوں نے جبالیہ کے علاقے میں اقوام متحدہ کے زیر انتظام چلنے والے ایک اسکول میں قائم مہاجر کیمپ میں پناہ لی ہوئی تھی۔ اے ایف پی کے مطابق اس اسکول پر دو شیل فائر کیے گئے۔ اقوام متحدہ کے ترجمان کرس گنیس کے مطابق، کچھ بہت ہی خوفناک ہوا ہے۔ تاہم انہوں نے اس کی مزید وضاحت نہیں کی۔ اقوام متحدہ کی مہاجرین سے متعلق ایجنسی نے اس اسکول پر بمباری کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد 16 بتائی ہے تاہم مرنے والوں کی شناخت ظاہر نہیں کی گئی۔ اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں فلسطینی ہلاکتوں کی کل تعداد 1350 تک پہنچ گئی ہے فلسطینی ایمرجنسی سروسز کے ترجمان اشرف القدرہ کے مطابق گزشتہ شب خان یونس کے علاقے میں ایک گھر کو بھی نشانہ بنایا گیا جہاں ایک بچے سمیت ایک ہی خاندان کے 10 افراد جاں بحق ہوئے۔غزہ پٹی میں اسرائیلی بمباری کا تازہ ترین شکار ایک ہی خاندان کے سات دیگر افراد بھی بنے ہیں جن میں چار بچے اور ایک خاتون شامل ہیں۔ اشرف القدرہ کے مطابق غزہ سٹی کے شمال مشرقی حصے التفاح میں ایک گھر پر ایک اسرائیل شیل گرا جس کے نتیجے میں یہ ہلاکتیں ہوئیں۔ساحلی علاقے غزہ پٹی میں 1.7 ملین فلسطینی آباد ہیں۔ گزشتہ شب سے اب تک اس علاقے کے مختلف حصوں میں کی جانے والی اسرائیلی بمباری کے نتیجے میں 28 دیگر افراد بھی ہلاک ہوئے۔ اسرائیل کی طرف سے آٹھ جولائی کو غزہ پٹی کے علاقے میں فضائی حملوں کا آغاز کیا گیا تھا جبکہ 17 جولائی کو اس علاقے میں زمینی کارروائی بھی شروع کر دی گئی تھی۔اسرائیل اور حماس کے درمیان جاری جنگ کے اس سلسلے کو 23 دن ہو چکے ہیں اور اس دوران غزہ پٹی میں اسرائیلی حملوں کے نتیجے میں فلسطینی ہلاکتوں کی کل تعداد 1350 تک پہنچ گئی ہے۔ ان حملوں میں 7200 دیگر افراد زخمی بھی ہیں۔ خان یونس کے علاقے میں ایک بچے سمیت ایک ہی خاندان کے 10 افراد ہلاک ہوئے ہیںاقوام متحدہ کی ایجنسی کے مطابق اس لڑائی کے باعث 240000 فلسطینی اندرونی طور پر بے گھر ہوئے ہیں اور ان میں سے دو لاکھ نے اقوام اس ایجنسی کے تحت چلنے والے 85 حفاظتی مراکز میں پناہ حاصل کر رکھی ہے۔SHJ/ILY

Archives